اپریل کی بارشیں

اپریل کی بارشیں
تحریر محمد اظہر حفیظ

6 اپریل کو بہن کو چھوڑنے براستہ موٹروے سمندری گیا، بہت دنوں بعد سورج نکلتے دیکھا اور اس سے پہلے کی پنک ، نیلی اور نارنجی روشنی دیکھی اس کا اپنا ھی سحر ھے، پھر سورج کو گندم کی سبز اور سنہری فصلوں کے پیچھے سے نکلتا دیکھا، پرندے خوراک کی تلاش میں نکل پڑے تھے فیصل آباد موٹروے تک گندم سبز تھی پھر کچھ سنہری ھونا شروع ھوئی، باجی گندم ابھی تک پکی نہیں باو ٹھنڈ ھی جان نہیں چھوڑ رھی، اے وچاری کتھوں پکے، پہلی دفعہ اپریل میں سبز گندم دیکھی عجیب محسوس ھورھا تھا کوئی تھریشر نہیں لگا تھا اور نہ ھی کٹائی شروع ھورھی تھی پھر میں گاڑی میں اکیلا ھی رہ گیا یہ سوچتے ھوئے کہ یہ سب کیا ھورھا ھے۔ باجی بولیں باو کتھے چلا گیا۔ باجی کجھ نہیں بس گندم دا سوچ رھیا سی۔ توں اننی ھر شے دی فکر نہ کریا کر میرا ویر، پہلے ھی تینوں شوگر اے، پھر ھم باتیں کرتے کرتے سمندری پہنچ گئے اور اسے چھوڑ کر میں واپس اسلام آباد آگیا، گندم وھیں رہ گئی اور میرے خیالات بھی۔ کل ھی سوچ رھا تھا کہ الحمدللہ دس دن اوپر ھوگئے اب تو سونا آگیا ھوگیا میرے کسان کی گندم پر ۔ کھیت سونا اگلیں گے اور میرا کسان خوشحال ھوجائے گا۔ آج سارا دن کی بارش دیکھ دیکھ عجیب عجیب خیالات آرھے تھے کہ بڑے کہتے تھے ربا رحمت دی بارش برسائیں اور مجھے سب کچھ عجیب لگ رھا تھا۔ جو کرونا سے بچ جائیں گے وہ اپریل کی بارش میں چلے جائیں گے، کرونا ھی نہیں اپریل کی بارشیں بھی کسان کا سانس روک دیتی ھیں۔ جمعہ کا دن تھا اور باجماعت نماز اور دعا کی بھی اجازت نہیں تھی۔ جیسے رب کی مرضی، پر ربا میریا تو تو جانتا ھے اس فصل کے ساتھ تیرے بندے تجھ سے کتنی امیدیں لگا بیٹھے ھوتے ھیں، بچوں کی شادیاں کرنی ھیں، قرض اتارنے ھیں، ماں باپ کو حج کروانا ھے، گھر بنانا ھے، فیس دینی ھے، علاج کروانا ھے، بڑوں کی آنکھیں بنوانی ھیں، غریبوں کے گھروں میں سال کی گندم بھجوانی ھے، سب کچھ ھی تو رہ گیا، چل اس بارش تو بعد کرونا اچھا لگنا شروع ھوگیا، ھن کہہ تے سکدے آں کرونا دی وجہ تو سب بند اے، حج نہیں کرسکدے، بچیاں دے ویاہ نہیں کرسکدے، سارے ھسپتال بھرے ھوئے نے کتھوں علاج کروائیے، شادی ھال بند نے، پر میرا نام تے ربا کسے بے نظیر تے بےحس پروگرام وچ وی نہیں میں تے صاحب حیثیت زمیندار آں، میرے اپنے دانے گلے ھوگئے کسے نوں کی دیاں آٹے وچوں بو آندی اے، سپرے والے دے پیسے کتھوں دیاں، کس کس نو کرونا دا بہانہ کراں، سال کداں گزاراں، ساڈے وچوں کجھ سن جنناں آٹے تے چینی دا فائدہ چکیا، سانوں تے انناں دے ناں وی نہیں آنندے سانوں تے بخش دینا سی، تیرے واسطے کی مسئلہ اے کتھے بارش ھووئے تے کتھے نہ ھووے، سنیا سی حضرت نوح علیہ السلام دے ویلے سیلاب وچ او اماں بچ گئی سی جنھوں حضرت نوح علیہ السلام نال لیجانا بھل گئے سن، او صحن وچ جھاڑو لاندی رہ گئی سی تے سیلاب گزر گیا، ناں کر ساڈے نال اینج ساڈا تیرے علاوہ کون اے، میں تے جمعہ دی نماز وی گھر ھی پڑی سی رویا وی سی ربا بارش روک دے خشک فصل گیلی ھوجانی اے، وڈے دسدے نے تہانوں آنسوں بڑے پسند نے آپ دس کدی میں پہلوں انناں رویا تیرے اگے، رحم کر ربا رحم کر، فضل کردے اپنا، ماسک، سینیٹائزر، وینٹیلیٹر تو بعد اسی گندم دی کمی دا شکار نہ ھو جائیے، غصہ چھڈ دے معاف کردے، آج راجہ رضوان سادگی وچ پوچھ رھیا سی سر جی یہ جو ساری دنیا میں بے وقتی بارشیں ھوتیں ھیں یہ منصوعی ھوتی ھیں امریکہ کرواتا ھے۔ تاکہ غذا کی قلت ھو سیلاب آئیں، راجے میرے ویر ایک تو لفظ مصنوعی ھوتا ھے منصوعی نہیں اور پکا یقین رکھ یہ میرے رب کے علاوہ کوئی نہیں کر سکتا، راجہ پھر بول پڑا پر سر جی رب رحیم، کریم ایسے بے وقت کیوں کرے گا۔ میں سمجھانے لگا میری جان راجے جب بڑے ناراض ھوں تو کچھ ڈانٹ ڈپٹ کر ھی دیتے ھیں، پر سر جی اللہ تو سب سے بڑا ھے، ھاں یار راجے پر کچھ ناراض سا ھے، ھماری غلطیاں بھی تو بہت سنگین ھیں، دعا کر معاف کردے۔ سر جی اس میں رونے والی کیا بات ھے، بارش ھی تو ھوئی ھے، جس کے سامنے رو رھا ھوں اس کو تو پتہ ھے، کیوں رو رھا ھوں، آو سب ملکر اس کے سامنے سجدے میں پڑکر روئیں منائیں اسکو یقیننا وہ بہتر معاف کرنے والا ھے۔ معاف کردے گا۔ انشاءاللہ

Prev ناکرونا وائرس
Next مجھے بھی سمجھائیں

Leave a comment

You can enable/disable right clicking from Theme Options and customize this message too.