پتنگ

پتنگ
تحریر فوٹوگرافر محمد اظہر حفیظ 
جب سے ھوش سنبھالا سب یہ ھی کہتے سنا پتنگ میری ھے انکل پتنگ آپکی چھت پر آئی دے دیں آج خبریں سنی تو پتہ چلا ایم کیو ایم کے دو دھڑے اس بات پر بضد ھیں کہ پتنگ میری ھے اور پتنگ ھے کہ بلے چڑ گئی ھے اب کسی کے ھاتھ نہیں آرھی۔ وسیم اکرم صاحب ہمارے بہت بڑے کھلاڑی ھیں سنا گیا ھے ان کے مضبوط کھلاڑی ھونے میں پتنگ لوٹنے کا بہت عمل دخل ھے اب جس پارٹی نے بھی پتنگ لوٹنی ھے بہتر ھے وہ وسیم اکرم صاحب کی خدمات حاصل کریں تاکہ پتنگ انکی ملکیت میں آجائے۔ پتنگ ھمیشہ اختلاف کا باعث رھی پنجاب میں تو پتنگ بازی پر پابندی لگادی گئی کہ کہیں پتنگ پنجاب میں نہ آجائے مجھے یاد ھے گاوں میں چھت پر پتنگ اڑاتے تھے شک بھی ھو جائے ابا جی آرہے ھیں میں وھیں اسی بلندی پر ڈور توڑ کر پتنگ ھوا کے حوالے کر دی جاتی تھی کیونکہ پتنگ کی اتنی قیمت نہیں تھی جتنی ایم کیو ایم یا پنجاب حکومت سمجھتی ھے مار زیادہ پڑتی تھی اور پتنگ سستی تھی فورا آکر امی جی کے ساتھ سوجاتا تھا امی جی میرے سر کو ھاتھ لگاتی تھیں اور سر کی گرمی محسوس کرکے ایک شاندار تھپڑ لگاتی تھی پھر گرمی میں پتنگ اڑائی ابا جی کے گھر پہنچنے سے پہلے تربیت شروع ھو جاتی تھی ھمیشہ پتنگ خرید کر آڑائی کبھی کٹی ھوئے پتنگ پکڑنے کی کوشش نہیں کی کیوں کہ میں لوٹ مار پر یقین نہیں رکھتا ایم کیو ایم کی پتنگ کٹ چکی ھے میں انکی کوئی مدد نہیں کر سکتا ھاں کسی پتنگ لوٹنے والے کی مدد حاصل کریں کیونکہ پتنگ انھوں نے بھی لوٹی ھی تھی انکی اپنی نہیں تھی تلامیں کسی اور کی تھی کننی کسی اور نے باندی تھی اور انھوں نے ھمیشہ اڑائی اور وہ بھی کیمیکل ڈور سے اور بہت سی گردنیں بھی کاٹی لیکن سزا بھی کسی کو نہیں ھوئی شاپر کی پتنگ اڑانے والوں کی زندگیاں بدل گئیں لیکن پتنگ پھر کٹ گئی اور بو کاٹا بو کاٹا کی آوازیں آنا شروع ہوگئیں شاید حسب روایت فائرنگ بھی شروع ھو جائے اور کچھ بچوں کی مزید گردنیں کٹ جائیں کچھ پتنگ کم ھوا میں بغیر کننی نہیں اڑتی اور انکو مختلف قوتیں کننی دیتی رھی ھیں تو انکی پتنگ اڑتی ھے
پتنگیں کئی نسل کی ھوتی ھیں جیسا کہ آپکو معلوم ھے کچھ پتنگیں بہت شور کرتی ھیں کم قیمت ھوتی ھیں اور پیچا نہیں لگا سکتیں بس اکیلی اڑتی رھتی شور کرتی رھتی ھیں کچھ پتنگ بہت طاقت ور اور زور میں ھوتی ھیں چھوٹے پتنگ ان سے دور رھتے ھیں کٹنے سے ڈرتے ھیں پتنگ کے پیچھے کیا ھے پننا ھے یا چرکھڑی اس سے پتنگ کی رفتار میں ھوا کے ساتھ فرق پڑتا ھے اور جب ڈور کا ایک ٹوٹا ھی ھو آپ کے جاتے میں تو بندہ اوقات میں رھتا ھے نہ پیچ لگاتا ھے اور نہ بلندیوں پر جانے کی کوشش کرتا ھے ایسا ھمیشہ پکڑی ھوئی پتنگ کے ساتھ ھی ھوتا ھے سیاست کبھی عبادت ھوتی تھی اب تو شاید پتنگ بازی ھی ھو رھی ھے مختلف پتنگیں ،مختلف ڈور، مختلف طاقت اور کیمیکل ڈور والی قاتل جماعتیں۔ خود کش پتنگیں۔ سب قسم کی پتنگ بازی پر پابندی ھونی چاھیے سارے پاکستان میں۔
تاکہ بچ سکیں ھماری گردنیں کٹنے سے

Prev برداشت
Next عقلمند لوگ

Leave a comment

You can enable/disable right clicking from Theme Options and customize this message too.